Play Copy
ﭜﭝﭞﭟﭠﭡﭢﭣﭤﭥﭦﭧﭨﭩﭪﭫﭬﭭﭮﭯﭰﭱﭲﭳﭴﭵﭶﭷﭸﭹﭺﭻﭼﭽﭾﭿﮀﮁﮂﮃ

46. اور کچھ یہودی (تورات کے) کلمات کو اپنے (اصل) مقامات سے پھیر دیتے ہیں اور کہتے ہیں: ہم نے سن لیا اور نہیں مانا، اور (یہ بھی کہتے ہیں:) سنیئے! (معاذ اللہ!) آپ سنوائے نہ جائیں، اور اپنی زبانیں مروڑ کر دین میں طعنہ زنی کرتے ہوئے”رَاعِنَا“ کہتے ہیں، اور اگر وہ لوگ (اس کی جگہ) یہ کہتے کہ ہم نے سنا اور ہم نے اطاعت کی اور (حضور! ہماری گزارش) سنئے اور ہماری طرف نظرِ (کرم) فرمائیے تو یہ اُن کے لئے بہتر ہوتا اور (یہ قول بھی) درست اور مناسب ہوتا، لیکن اللہ نے ان کے کفر کے باعث ان پر لعنت کی سو تھوڑے لوگوں کے سوا وہ ایمان نہیں لاتےo

46. And some amongst the Jews pervert the words (of the Torah) from their (original) places and say: ‘We have heard but we disobey,’ and (also say): ‘Listen! (God forbid!) May you not be listened to,’ and twisting their tongues, scoffing at Din (Religion) they say: ‘Ra‘ina.’ And, (instead,) if they had said: ‘We have heard and obeyed,’ and ‘(Your Eminence! Please) give audience (to our request), and bless us with a (benevolent and kind) look,’ that would have been better for them, and (this utterance) would have been right and appropriate (too); but Allah has cursed them owing to their disbelief. So they do not believe except a few.

(an-Nisā’, 4 : 46)