Play Copy
ﮧﮨﮩﮪﮫﮬﮭﮮﮯﮰ

20. اور یوسف (علیہ السلام) کے بھائیوں نے (جو موقع پر آگئے تھے اسے اپنا بھگوڑا غلام کہہ کر انہی کے ہاتھوں) بہت کم قیمت گنتی کے چند درہموں کے عوض بیچ ڈالا کیونکہ وہ راہ گیر اس (یوسف علیہ السلام کے خریدنے) کے بارے میں (پہلے ہی) بے رغبت تھے (پھر راہ گیروں نے اسے مصر لے جا کر بیچ دیا)o

20. And Yusuf’s (Joseph’s) brothers (who had returned to the site showed him as their deserter servant and) sold him (to the same caravan) for a low price—a few dirhams—because the travellers were (already) disinterested in (buying) him. (And later, the travellers took him to Egypt where they sold him.)

(Yūsuf, 12 : 20)