irfan-ul-quran irfan-ul-quran irfan-ul-quran irfan-ul-quran irfan-ul-quran irfan-ul-quran irfan-ul-quran irfan-ul-quran irfan-ul-quran irfan-ul-quran irfan-ul-quran
Ayat of the Day: And have the disbelievers not seen that the whole heavenly universe and the earth were (all) joined together as one unit and then We split them apart? And We originated (the life of) living organism (on earth) from water. So do they not accept faith (even after learning these facts brought forth by the Qur’an)? (al-Ambiyā’, 21:30)
irfan-ul-quran irfan-ul-quran
 
Irfan-ul-Quran: - Tāhā (

Sura Tāhā

()
Sura : Makki by Tilawat : 20 by Reveal : 45 Ruku` : 8 Ayats : 135 Part No. : 16
In the Name of Allah, Most Compassionate, Ever-Merciful
1. طا، ہا (حقیقی معنی اﷲ اور رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہی بہتر جانتے ہیں)o
1. Ta-Ha. (Only Allah and the Messenger [blessings and peace be upon him] know the real meaning.)
2. (اے محبوبِ مکرّم!) ہم نے آپ پر قرآن (اس لئے) نازل نہیں فرمایا کہ آپ مشقت میں پڑ جائیںo
2. (O My Esteemed Beloved!) We have not revealed the Qur’an to you that you land in distress.
3. مگر (اسے) اس شخص کے لئے نصیحت (بنا کر اتارا) ہے جو (اپنے رب سے) ڈرتا ہےo
3. But (it) is (revealed as) admonition for him who fears (his Lord).
4. (یہ) اس (اللہ) کی طرف سے اتارا ہوا ہے جس نے زمین اور بلند و بالا آسمان پیدا فرمائےo
4. (This) has been revealed by (Allah) Who created the earth and the lofty heavens.
5. (وہ) نہایت رحمت والا (ہے) جو عرش (یعنی جملہ نظام ہائے کائنات کے اقتدار) پر (اپنی شان کے مطابق) متمکن ہوگیاo
5. (He is) Most Kind (Lord) Who established (His sovereignty) on the Throne (of power and supreme authority over all the systems of the universe, befitting His Glory).
6. (پس) جو کچھ آسمانوں (کی بالائی نوری کائناتوں اور خلائی مادی کائناتوں) میں ہے اور جو کچھ زمین میں ہے اور جو کچھ ان دونوں کے درمیان (فضائی اور ہوائی کرّوں میں) ہے اور جو کچھ سطح ارضی کے نیچے آخری تہہ تک ہے سب اسی کے (نظام اور قدرت کے تابع) ہیںo
6. (So) whatever is in the heavens (i.e., the upper divine and celestial spheres and spatial terrestrial spheres) and whatever is in the earth and whatever is in between (i.e., the atmospheric spheres) and whatever is beneath the soil to its bed, all are (functioning in compliance with) His (command and control system).
7. اور اگر آپ ذکر و دعا میں جہر (یعنی آواز بلند) کریں (تو بھی کوئی حرج نہیں) وہ تو سِرّ (یعنی دلوں کے رازوں) اور اخفی (یعنی سب سے زیادہ مخفی بھیدوں) کو بھی جانتا ہے (تو بلند التجاؤں کو کیوں نہیں سنے گا)o
7. And (there is no harm) if, in remembrance and Prayer, you raise (your voice). He knows the secrets (of hearts) and also the most hidden mysteries. (Then how He will not hear the loud supplications!)
8. اللہ (اسی کا اسمِ ذات) ہے جس کے سوا کوئی معبود نہیں (گویا تم اسی کا اثبات کرو اور باقی سب جھوٹے معبودوں کی نفی کر دو)، اس کے لئے (اور بھی) بہت خوبصورت نام ہیں (جو اس کی حسین و جمیل صفات کا پتہ دیتے ہیں)o
8. Allah is (His Self-Name) besides Whom there is no God (i.e., believe in Him alone and deny all other false gods). There are (also) many other Beautiful Names for Him (that speak of His most beautiful attributes).
9. اور کیا آپ کے پاس موسٰی (علیہ السلام) کی خبر آچکی ہےo
9. And has the account of Musa (Moses) reached you?
10. جب موسٰی (علیہ السلام) نے (مدین سے واپس مصر آتے ہوئے) ایک آگ دیکھی تو انہوں نے اپنے گھر والوں سے کہا: تم یہاں ٹھہرے رہو میں نے ایک آگ دیکھی ہے (یا میں نے ایک آگ میں انس و محبت کا شعلہ پایا ہے) شاید میں اس میں سے کوئی چنگاری تمہارے لئے (بھی) لے آؤں یا میں اس آگ پر (سے وہ) رہنمائی پا لوں (جس کی تلاش میں سرگرداں ہوں)o
10. When Musa (Moses) saw a fire (on his way back to Egypt from Madyan), he said to his family: ‘Stay here. I have seen a fire (or I have perceived a flash of love and cordiality in a fire). Perhaps I may bring a brand from it for you (also), or I find at that fire the guidance (which I am searching for).’
11. پھر جب وہ اس (آگ) کے پاس پہنچے تو ندا کی گئی: اے موسٰیo
11. So when he reached that (fire), a call was made: ‘O Musa (Moses)!
12. بیشک میں ہی تمہارا رب ہوں سو تم اپنے جوتے اتار دو، بیشک تم طوٰی کی مقدس وادی میں ہوo
12. Certainly, I am your Lord, so take off your shoes. Verily, you are in the sacred valley of Tuwa.
13. اور میں نے تمہیں (اپنی رسالت کے لئے) چن لیا ہے پس تم پوری توجہ سے سنو جو تمہیں وحی کی جا رہی ہےo
13. And I have chosen you (for My Messengership), so listen to what is being revealed to you with absolute attentiveness.
14. بیشک میں ہی اللہ ہوں میرے سوا کوئی معبود نہیں سو تم میری عبادت کیا کرو اور میری یاد کی خاطر نماز قائم کیا کروo
14. Verily, I am Allah. There is no God other than Me. So always worship Me, and establish Prayer for the sake of My remembrance.
15. بیشک قیامت کی گھڑی آنے والی ہے، میں اسے پوشیدہ رکھنا چاہتا ہوں تاکہ ہر جان کو اس (عمل) کا بدلہ دیا جائے جس کے لئے وہ کوشاں ہےo
15. Certainly, the Last Hour is about to come. I want to keep it secret so that every soul may be rewarded for that (deed) for which it is exerting.
16. پس تمہیں وہ شخص اس (کے دھیان) سے روکے نہ رکھے جو (خود) اس پر ایمان نہیں رکھتا اور اپنی خواہشِ (نفس) کا پیرو ہے ورنہ تم (بھی) ہلاک ہوجاؤ گےo
16. So let not someone who (himself) does not believe in it and follows his own lust (of the lower self) prevent you from (focusing on) it, otherwise you (too) will perish.
17. اور یہ تمہارے داہنے ہاتھ میں کیا ہے اے موسیo
17. And what is this in your right hand, O Musa (Moses)?’
18. انہوں نے کہا: یہ میری لاٹھی ہے، میں اس پر ٹیک لگاتا ہوں اور میں اس سے اپنی بکریوں کے لئے پتے جھاڑتا ہوں اور اس میں میرے لئے کئی اور فائدے بھی ہیںo
18. He submitted: ‘This is my staff. I lean on it, and beat down leaves with it for my goats, and in it there are also many other benefits for me.’
19. ارشاد ہوا: اے موسٰی! اسے (زمین پر) ڈال دوo
19. (Allah) said: ‘O Musa (Moses), cast it down (on the ground).’
20. پس انہوں نے اسے (زمین پر) ڈال دیا تو وہ اچانک سانپ ہوگیا (جو ادھر ادھر) دوڑنے لگاo
20. So he cast it down (on the ground), and suddenly it became a serpent slithering (here and there).
21. ارشاد فرمایا: اسے پکڑ لو اور مت ڈرو ہم اسے ابھی اس کی پہلی حالت پر لوٹا دیں گےo
21. Allah said: ‘Catch it and do not fear. We shall transform it to its former state just now.’
22. اور (حکم ہوا:) اپنا ہاتھ اپنی بغل میں دبا لو وہ بغیر کسی بیماری کے سفید چمک دار ہو کر نکلے گا (یہ) دوسری نشانی ہےo
22. And (it was commanded:) ‘Press your hand in your armpit. It will come out radiant white without any disease. (This) is another sign.
23. یہ اس لئے (کر رہے ہیں) کہ ہم تمہیں اپنی (قدرت کی) بڑی بڑی نشانیاں دکھائیںo
23. (We are doing) this so that We show you greater signs of Our (might).
24. تم فرعون کے پاس جاؤ وہ (نافرمانی و سرکشی میں) حد سے بڑھ گیا ہےo
24. Go to Pharaoh. He has exceeded limits (in defiance and rebellion).’
25. (موسٰی علیہ السلام نے) عرض کیا: اے میرے رب! میرے لئے میرا سینہ کشادہ فرما دےo
25. Musa (Moses) prayed: ‘O my Lord, expand my breast for me.
26. اور میرا کارِ (رسالت) میرے لئے آسان فرما دےo
26. And make my task (as a Messenger) easy for me.
27. اور میری زبان کی گرہ کھول دےo
27. And untie the knot from my tongue,
28. کہ لوگ میری بات (آسانی سے) سمجھ سکیںo
28. That people may understand (easily) what I say.
29. اور میرے گھر والوں میں سے میرا ایک وزیر بنا دےo
29. And appoint for me a minister from my family.
30. (وہ) میرا بھائی ہارون (علیہ السلام) ہوo
30. (That) is Harun (Aaron), my brother.
31. اس سے میری کمرِ ہمت مضبوط فرما دےo
31. Provide me strength and backup with him.
32. اور اسے میرے کارِ (رسالت) میں شریک فرما دےo
32. And make him share my task (of Messengership),
33. تاکہ ہم (دونوں) کثرت سے تیری تسبیح کیا کریںo
33. So that we (both) may amply glorify You,
34. اور ہم کثرت سے تیرا ذکر کیا کریںo
34. And amply remember You.
35. بیشک تو ہمیں (سب حالات کے تناظر میں) خوب دیکھنے والا ہےo
35. Surely, You see us well (in the perspective of total scenario).’
36. (اللہ نے) ارشاد فرمایا: اے موسٰی! تمہاری ہر مانگ تمہیں عطا کردیo
36. (Allah) said: ‘O Musa (Moses), you are granted your every prayer.
37. اور بیشک ہم نے تم پر ایک اور بار (اس سے پہلے بھی) احسان فرمایا تھاo
37. And surely, We graciously favoured you once (earlier as well),
38. جب ہم نے تمہاری والدہ کے دل میں وہ بات ڈال دی جو ڈالی گئی تھیo
38. When We revealed to your mother’s heart what was revealed—
39. کہ تم اس (موسٰی علیہ السلام) کو صندوق میں رکھ دو پھر اس (صندوق) کو دریا میں ڈال دو پھر دریا اسے کنارے کے ساتھ آلگائے گا، اسے میرا دشمن اور اس کا دشمن اٹھا لے گا، اور میں نے تجھ پر اپنی جناب سے (خاص) محبت کا پرتَو ڈال دیا ہے (یعنی تیری صورت کو اس قدر پیاری اور من موہنی بنا دیا ہے کہ جو تجھے دیکھے گا فریفتہ ہو جائے گا)، اور (یہ اس لئے کیا) تاکہ تمہاری پرورش میری آنکھوں کے سامنے کی جائےo
39. To put him (Musa [Moses]) into a box and place that (box) into the river. Then the river will drift it to the bank. My enemy and his enemy will pick him up. And I cast on you from My presence a reflection of My (exceptional) love (i.e., We have made you so lovely and charismatic that whoever glances at you will be fascinated). And (this was done) so that you might be brought up before My eyes.
40. اور جب تمہاری بہن (اجنبی بن کر) چلتے چلتے (فرعون کے گھر والوں سے) کہنے لگی: کیا میں تمہیں کسی (ایسی عورت) کی نشاندہی کر دوں جو اس (بچہ) کی پرورش کر دے، پھر ہم نے تم کو تمہاری والدہ کی طرف (پرورش کے بہانے) واپس لوٹا دیا تاکہ اس کی آنکھ بھی ٹھنڈی ہوتی رہے اور وہ رنجیدہ بھی نہ ہو، اور تم نے (قومِ فرعون کے) ایک (کافر) شخص کو مار ڈالا تھا پھر ہم نے تمہیں (اس) غم سے (بھی) نجات بخشی اور ہم نے تمہیں بہت سی آزمائشوں سے گزار کر خوب جانچا، پھر تم کئی سال اہلِ مدین میں ٹھہرے رہے پھر تم (اللہ کے) مقرر کردہ وقت پر (یہاں) آگئے اے موسٰی! (اس وقت ان کی عمر ٹھیک چالیس برس ہوگئی تھی)o
40. (And) when your sister, (posing as a stranger,) walking along, said (to Pharaoh’s family): Shall I point out to you (a woman) who will nurse this (infant)? Then We brought you back to your mother (on the pretext of nursing) so that she might cool her eyes and might not feel aggrieved as well. And you killed a man (a disbeliever of Pharaoh’s people). Then We delivered you from (that) agony (too), and tested and assessed you through many trials. Then you stayed amongst the people of Madyan for many years. Musa (Moses)! Then you came (here) at the time fixed (by Allah. He was then exactly forty years old).
41. اور (اب) میں نے تمہیں اپنے (امرِ رسالت اور خصوصی انعام کے) لئے چن لیا ہےo
41. And (now) I have chosen you for Myself (for the task of Messengership and the exceptional favour).
42. تم اور تمہارا بھائی (ہارون) میری نشانیاں لے کر جاؤ اور میری یاد میں سستی نہ کرناo
42. Go, you and your brother (Harun [Aaron]), with My signs and do not slacken in remembering Me.
43. تم دونوں فرعون کے پاس جاؤ بیشک وہ سرکشی میں حد سے گزر چکا ہےo
43. Go, both of you, to Pharaoh; surely, he has transgressed all bounds in rebellion.
44. سو تم دونوں اس سے نرم (انداز میں) گفتگو کرنا شاید وہ نصیحت قبول کر لے یا (میرے غضب سے) ڈرنے لگےo
44. So talk to him politely. He may perhaps accept admonition or fear (My wrath).’
45. دونوں نے عرض کیا: اے ہمارے رب! بیشک ہمیں اندیشہ ہے کہ وہ ہم پر زیادتی کرے (گا) یا (زیادہ) سرکش ہوجائے (گا)o
45. Both of them submitted: ‘O our Lord, we fear lest he should commit some excess against us, or become (more) rebellious.’
46. ارشاد فرمایا: تم دونوں نہ ڈرو بیشک میں تم دونوں کے ساتھ ہوں میں (سب کچھ) سنتا اور دیکھتا ہوںo
46. (Allah) said: ‘Do not fear. I am indeed with you both. I hear and see (all).
47. پس تم دونوں اس کے پاس جاؤ اور کہو: ہم تیرے رب کے بھیجے ہوئے (رسول) ہیں سو تو بنی اسرائیل کو (اپنی غلامی سے آزاد کرکے) ہمارے ساتھ بھیج دے اور انہیں (مزید) اذیت نہ پہنچا، بیشک ہم تیرے پاس تیرے رب کی طرف سے نشانی لے کر آئے ہیں، اور اس شخص پر سلامتی ہو جس نے ہدایت کی پیروی کیo
47. So, go you both to him and say: We are (the Messengers) sent by your Lord. So (set free) the Children of Israel (from your slavery and) send them with us. And do not persecute them (anymore). Surely, we have brought you a sign from your Lord. And peace be upon him who follows guidance!
48. بیشک ہماری طرف وحی بھیجی گئی ہے کہ عذاب (ہر) اس شخص پر ہوگا جو (رسول کو) جھٹلائے گا اور (اس سے) منہ پھیر لے گاo
48. Verily, it has been revealed to us that the torment will come upon (every) such person that rejects (the Messenger) and turns away from him.’
49. (فرعون نے) کہا: تو اے موسٰی! تم دونوں کا رب کون ہےo
49. (Pharaoh) said: ‘O Musa (Moses)! Who is the Lord of you both?’
50. (موسٰی علیہ السلام نے) فرمایا: ہمارا رب وہی ہے جس نے ہر چیز کو (اس کے لائق) وجود بخشا پھر (اس کے حسبِ حال) اس کی رہنمائی کیo
50. Musa (Moses) said: ‘Our Lord is He Who brought everything into being (as most suitable), then guided it (according to its potential).’
51. (فرعون نے) کہا: تو (ان) پہلی قوموں کا کیا حال ہوا (جو تمہارے رب کو نہیں مانتی تھیں)o
51. (Pharaoh) said: ‘So, what was the fate of former people (who did not believe in your Lord)?’
52. (موسٰی علیہ السلام نے) فرمایا: ان کا علم میرے رب کے پاس کتاب میں (محفوظ) ہے، نہ میرا رب بھٹکتا ہے اور نہ بھولتا ہےo
52. (Musa [Moses]) said: ‘The knowledge about them is recorded (and saved) in a Book with My Lord. My Lord does not go wrong, nor does He forget.’
53. وہی ہے جس نے زمین کو تمہارے رہنے کی جگہ بنایا اور اس میں تمہارے (سفر کرنے کے) لئے راستے بنائے اور آسمان کی جانب سے پانی اتارا، پھر ہم نے اس (پانی) کے ذریعے (زمین سے) انواع و اقسام کی نباتات کے جوڑے نکال دیئےo
53. He is the One Who made the earth habitable for you and provided therein paths for you (to travel) and sent down water from the sky. Then by means of that (water) We bring forth (from the earth) pairs of various kinds of vegetation.
54. تم کھاؤ اور اپنے مویشیوں کو چراؤ، بیشک اس میں دانش مندوں کے لئے نشانیاں ہیںo
54. Eat and pasture your cattle. Surely, there are signs in it for the wise.
55. (زمین کی) اسی (مٹی) سے ہم نے تمہیں پیدا کیا اور اسی میں ہم تمہیں لوٹائیں گے اور اسی سے ہم تمہیں دوسری مرتبہ (پھر) نکالیں گےo
55. We created you from this (very soil of the earth), and We shall return you into the same, and shall bring you forth from the very same once more.
56. اور بیشک ہم نے اس (فرعون) کو اپنی ساری نشانیاں (جو موسٰی اور ہارون علیھما السلام کو دی گئی تھیں) دکھائیں مگر اس نے جھٹلایا اور (ماننے سے) انکار کر دیاo
56. And surely We showed him (Pharaoh) all Our signs (bestowed upon Musa [Moses] and Harun [Aaron]), but he belied and refused to believe.
57. اس نے کہا: اے موسٰی! کیا تم ہمارے پاس اس لئے آئے ہو کہ تم اپنے جادو کے ذریعہ ہمیں ہمارے ملک سے نکال دوo
57. He said: ‘Musa (Moses), have you come to us to drive us out of our land with your magic?
58. سو ہم بھی تمہارے پاس اسی کی مانند جادو لائیں گے تم ہمارے اور اپنے درمیان (مقابلہ کے لئے) وعدہ طے کرلو جس کی خلاف ورزی نہ ہم کریں اور نہ ہی تم، (مقابلہ کی جگہ) کھلا اور ہموار میدان ہوo
58. So we shall also bring you magic resembling it. Therefore, settle an appointment between us and yourself (for the contest) which neither we nor you shall violate. (The place of contest) is to be an open and smooth ground.’
59. (موسٰی علیہ السلام نے) فرمایا: تمہارے وعدے کا دن یومِ عید (سالانہ جشن کا دن) ہے اور یہ کہ (اس دن) سارے لوگ چاشت کے وقت جمع ہوجائیںo
59. (Musa [Moses]) said: ‘The day of your promise is the Eid (‘Id) Day (the day of Annual Festival), and that (on that day) all the people are to assemble there early in the forenoon.’
60. پھر فرعون (مجلس سے) واپس مڑ گیا سو اس نے اپنے مکر و فریب (کی تدبیروں) کو اکٹھا کیا پھر (مقررہ وقت پر) آگیاo
60. Then Pharaoh went back (from the meeting), put together his (schemes of) pretension and deception and then came back (at the appointed time).
61. موسٰی (علیہ السلام) نے ان (جادوگروں) سے فرمایا: تم پر افسوس (خبردار!) اللہ پر جھوٹا بہتان مت باندھنا ورنہ وہ تمہیں عذاب کے ذریعے تباہ و برباد کردے گا اور واقعی وہ شخص نامراد ہوا جس نے (اللہ پر) بہتان باندھاo
61. Musa (Moses) said to them(the sorcerers): ‘Woe to you! (Beware!) Do not invent a lie against Allah lest He should eliminate you by torment. And surely, he who fabricates a lie (against Allah) is a failure.’
62. چنانچہ وہ (جادوگر) اپنے معاملہ میں باہم جھگڑ پڑے اور چپکے چپکے سرگوشیاں کرنے لگےo
62. Thereupon, they (the sorcerers) disputed amongst themselves about their affair and started whispering inaudibly.
63. کہنے لگے: یہ دونوں واقعی جادوگر ہیں جو یہ ارادہ رکھتے ہیں کہ تمہیں جادو کے ذریعہ تمہاری سر زمین سے نکال باہر کریں اور تمہارے مثالی مذہب و ثقافت کو نابود کردیںo
63. They said: ‘These two are really magicians who have the intention to drive you out of your land with sorcery, and put an end to your exemplary culture and religion.
64. (انہوں نے باہم فیصلہ کیا) پس تم (جادو کی) اپنی ساری تدابیر جمع کر لو پھر قطار باندھ کر (اکٹھے ہی) میدان میں آجاؤ، اور آج کے دن وہی کامیاب رہے گا جو غالب آجائے گاo
64. (They mutually decided.) So, collect all your tricks (of magic), and come into the arena (together) in a queue, and the one who prevails today will be victorious.’
65. (جادوگر) بولے: اے موسٰی! یا تو تم (اپنی چیز) ڈالو اور یا ہم ہی پہلے ڈالنے والے ہوجائیںo
65. (The magicians) said: ‘O Musa (Moses), either you cast (your thing) or we become the first ones to cast.’
66. (موسٰی علیہ السلام نے) فرمایا: بلکہ تم ہی ڈال دو، پھر کیا تھا اچانک ان کی رسیاں اور ان کی لاٹھیاں ان کے جادو کے اثر سے موسٰی (علیہ السلام) کے خیال میں یوں محسوس ہونے لگیں جیسے وہ (میدان میں) دوڑ رہی ہیںo
66. (Musa [Moses]) said: ‘Rather you cast down.’ Then the sight was that suddenly their cords and rods, by the effect of their magic, seemed to Musa (Moses) as if they were slithering (on the ground).
67. تو موسٰی (علیہ السلام) اپنے دل میں ایک چھپا ہوا خوف سا پانے لگےo
67. Now Musa (Moses) felt a sort of hidden fear in his heart.
68. ہم نے (موسٰی علیہ السلام سے) فرمایا: خوف مت کرو بیشک تم ہی غالب رہوگےo
68. We said (to Musa [Moses]): ‘Do not fear. Verily, you will have the upper hand.
69. اور تم (اس لاٹھی کو) جو تمہارے داہنے ہاتھ میں ہے (زمین پر) ڈال دو وہ اس (فریب) کو نگل جائے گی جو انہوں نے (مصنوعی طور پر) بنا رکھا ہے۔ جو کچھ انہوں نے بنا رکھا ہے (وہ تو) فقط جادوگر کا فریب ہے، اور جادوگر جہاں کہیں بھی آئے گا فلاح نہیں پائے گاo
69. And cast down (this staff) that is in your right hand (on the ground). It will swallow up that (craft) which they have contrived (artificially). Whatever they have wrought is but a deceitful trick of a sorcerer, and wherever a magician may come, he will not be successful.’
70. پس (ایسا ہی ہوا اور) سارے جادوگر سجدے میں گرا دیے گئے کہنے لگے: ہم ہارون اور موسٰی (علیہما السلام) کے رب پر ایمان لے آئےo
70. (Then things happened the same way.) So all the sorcerers were made to fall down in prostration (and) said: ‘We embrace faith in the Lord of Harun (Aaron) and Musa (Moses).’
71. (فرعون) کہنے لگا: تم اس پر ایمان لے آئے ہو قبل اس کے کہ میں تمہیں اجازت دوں، بیشک وہ (موسٰی) تمہارا (بھی) بڑا (استاد) ہے جس نے تم کو جادو سکھایا ہے، پس (اب) میں ضرور تمہارے ہاتھ اور تمہارے پاؤں الٹی سمتوں سے کاٹوں گا اور تمہیں ضرور کھجور کے تنوں میں سولی چڑھاؤں گا اور تم ضرور جان لوگے کہ ہم میں سے کون عذاب دینے میں زیادہ سخت اور زیادہ مدت تک باقی رہنے والا ہےo
71. (Pharaoh) said: ‘You have embraced faith in Him before I grant you permission. Surely, he (Musa [Moses]) is also your chief (trainer) who has taught you magic. So, (now) I shall certainly cut off your hands and your feet on the opposite sides and shall certainly crucify you on the palm trunks. Then you shall come to know for sure which of us is sterner in inflicting torture and lasts for a longer term.’
72. (جادوگروں نے) کہا: ہم تمہیں ہرگز ان واضح دلائل پر ترجیح نہیں دیں گے جو ہمارے پاس آچکے ہیں، اس (رب) کی قسم جس نے ہمیں پیدا فرمایا ہے! تو جو حکم کرنے والا ہے کر لے، تُو فقط (اس چند روزہ) دنیوی زندگی ہی سے متعلق فیصلہ کر سکتا ہےo
72. (The magicians) said: ‘We shall not at all prefer you to the clear signs that have come to us. By that (Lord) Who has created us, decide whatever you want to do, for you can decide merely about (this few days’) worldly life.
73. بیشک ہم اپنے رب پر ایمان لائے ہیں تاکہ وہ ہماری خطائیں بخش دے اور اسے بھی (معاف فرما دے) جس جادوگری پر تو نے ہمیں مجبور کیا تھا، اور اللہ ہی بہتر ہے اور ہمیشہ باقی رہنے والا ہےo
73. We have indeed believed in our Lord in order that He forgives us our sins, and also (forgives) that sorcery to which you forced us, and Allah is the Best and Ever-Abiding.’
74. بیشک جو شخص اپنے رب کے پاس مجرم بن کر آئے گا تو بیشک اس کے لئے جہنم ہے، (اور وہ ایسا عذاب ہے کہ) نہ وہ اس میں مر سکے گا اور نہ ہی زندہ رہے گاo
74. Surely, whoever comes to his Lord as an evildoer, certainly for him is Hell. (And it is such a torment) wherein he will neither die nor survive.
75. اور جو شخص اس کے حضور مومن بن کر آئے گا (مزید یہ کہ) اس نے نیک عمل کئے ہوں گے تو ان ہی لوگوں کے لئے بلند درجات ہیںo
75. And whoever comes to His presence as a believer (and) has (also) done good deeds, it is they for whom are high ranks.
76. (وہ) سدا بہار باغات ہیں جن کے نیچے سے نہریں رواں ہیں (وہ) ان میں ہمیشہ رہنے والے ہیں، اور یہ اس شخص کا صلہ ہے جو (کفر و معصیت کی آلودگی سے) پاک ہو گیاo
76. (Those) are evergreen gardens beneath which streams flow. (They) will dwell therein forever. And that is the reward for the one who purifies himself (of the impurity and indecency of disbelief and immorality).
77. اور بیشک ہم نے موسٰی (علیہ السلام) کی طرف وحی بھیجی کہ میرے بندوں کو راتوں رات لے کر نکل جاؤ، سو ان کے لئے دریا میں (اپنا عصا مار کر) خشک راستہ بنا لو، نہ (فرعون کے) آپکڑنے کا خوف کرو اور نہ (غرق ہونے کا) اندیشہ رکھوo
77. And certainly We sent Revelation to Musa (Moses): ‘Move out at night taking My servants with you. So, make a dry path in the river (by striking your staff). Have no fear to be overtaken (by Pharaoh), nor be afraid (of drowning).’
78. پھر فرعون نے اپنے لشکروں کے ساتھ ان کا تعاقب کیا پس دریا (کی موجوں) نے انہیں ڈھانپ لیا جتنا بھی انہیں ڈھانپاo
78. Then Pharaoh chased them with his troops. So, the (waves of the) river swept over them as much as they covered them up.
79. اور فرعون نے اپنی قوم کو گمراہ کردیا اور انہیں سیدھے راستہ پر نہ لگایاo
79. And Pharaoh led his people astray, and did not guide them to the right path.
80. اے بنی اسرائیل! (دیکھو) بیشک ہم نے تمہیں تمہارے دشمن سے نجات بخشی اور ہم نے تم سے (کوہِ) طور کی داہنی جانب (آنے کا) وعدہ کیا اور (وہاں) ہم نے تم پر من و سلوٰی اتاراo
80. O Children of Israel! (Realize!) Certainly, We delivered you from your enemy, and gave you the promise of (coming to) the right of (Mount) Tur, and (there) We sent down to you the manna and the quails.
81. (اور تم سے فرمایا:) ان پاکیزہ چیزوں میں سے کھاؤ جن کی ہم نے تمہیں روزی دی ہے اور اس میں حد سے نہ بڑھو ورنہ تم پر میرا غضب واجب ہو جائے گا، اور جس پر میرا غضب واجب ہوگیا سو وہ واقعی ہلاک ہوگیاo
81. (And He said to you:) ‘Eat of the pure things that We have provided for you, and do not exceed limits in that, or My wrath will become inevitable for you. And he on whom My wrath comes due is in truth destroyed.’
82. اور بیشک میں بہت زیادہ بخشنے والا ہوں اس شخص کو جس نے توبہ کی اور ایمان لایا اور نیک عمل کیا پھر ہدایت پر (قائم) رہاo
82. And I am surely Most Forgiving to him who repents and affirms faith and behaves piously, then sticks to guidance (firmly).
83. اور اے موسٰی! تم نے اپنی قوم سے (پہلے طور پر آجانے میں) جلدی کیوں کیo
83. And, O Musa (Moses), why did you hasten (in coming to Tur ahead of) your people?
84. (موسٰی علیہ السلام نے) عرض کیا: وہ لوگ بھی میرے پیچھے آرہے ہیں اور میں نے (غلبۂ شوق و محبت میں) تیرے حضور پہنچنے میں جلدی کی ہے اے میرے رب! تاکہ تو راضی ہو جائےo
84. (Musa [Moses]) submitted: ‘They too are coming behind me, and I have hastened to appear before Your presence (possessed by love and ecstasy) in order that You may be pleased, O my Lord!’
85. ارشاد ہوا: بیشک ہم نے تمہارے (آنے کے) بعد تمہاری قوم کو فتنہ میں مبتلا کر دیا ہے اور انہیں سامری نے گمراہ کر ڈالا ہےo
85. (Allah) said: ‘We have indeed put your people to trial after you (came away) and Samiri has led them astray.’
86. پس موسٰی (علیہ السلام) اپنی قوم کی طرف سخت غضبناک (اور) رنجیدہ ہوکر پلٹ گئے (اور) فرمایا: اے میری قوم! کیا تمہارے رب نے تم سے ایک اچھا وعدہ نہیں فرمایا تھا، کیا تم پر وعدہ (کے پورے ہونے) میں طویل مدت گزر گئی تھی، کیا تم نے یہ چاہا کہ تم پر تمہارے رب کی طرف سے غضب واجب (اور نازل) ہوجائے؟ پس تم نے میرے وعدہ کی خلاف ورزی کی ہےo
86. So, Musa (Moses) returned to his people, angered and grieved, (and) said: ‘O my people, did your Lord not give you a fair promise? Had a long time lapsed on you in (the fulfilment of) the promise? (Or) did you wish that the wrath of your Lord should come due (and befall) you? So you have violated (your) promise to me.’
87. وہ بولے: ہم نے اپنے اختیار سے آپ کے وعدہ کی خلاف ورزی نہیں کی مگر (ہوا یہ کہ) قوم کے زیورات کے بھاری بوجھ ہم پر لاد دیئے گئے تھے تو ہم نے انہیں (آگ میں) ڈال دیا پھر اسی طرح سامری نے (بھی) ڈال دیئےo
87. They said: ‘We have not violated our promise to you of our own will, but (what happened is that) we were loaded with the heavy burden of the ornaments of the people, so we cast them (into the fire); then similarly, Samiri (too) cast them away.’
88. پھر اس (سامری) نے ان کے لئے (ان گلے ہوئے زیورات سے) ایک بچھڑے کا قالب (تیار کرکے) نکال لیا اس میں (سے) گائے کی سی آواز (نکلتی) تھی تو انہوں نے کہا: یہ تمہارا معبود ہے اور موسٰی (علیہ السلام) کا (بھی یہی) معبود ہے بس وہ (سامری یہاں پر) بھول گیاo
88. Then he (Samiri) moulded (out of the molten ornaments) a statue of a calf for them which produced a sound like that of a cow. Then they said: ‘This is your Lord and the Lord of Musa (Moses too). So he (Samiri) forgot (at this point).’
89. بھلا کیا وہ (اتنا بھی) نہیں دیکھتے تھے کہ وہ (بچھڑا) انہیں کسی بات کا جواب (بھی) نہیں دے سکتا اور نہ ان کے لئے کسی نقصان کا اختیار رکھتا ہے اور نہ نفع کاo
89. Well, did they not see (even this much) that this (calf) could not answer them a word, nor had it any power to cause them any loss or profit?
90. اور بیشک ہارون (علیہ السلام) نے (بھی) ان کو اس سے پہلے (تنبیہاً) کہہ دیا تھا کہ اے قوم! تم اس (بچھڑے) کے ذریعہ تو بس فتنہ میں ہی مبتلا ہوگئے ہو، حالانکہ بیشک تمہارا رب (یہ نہیں وہی) رحمان ہے پس تم میری پیروی کرو اور میرے حکم کی اطاعت کروo
90. Earlier, Harun (Aaron also) had said to them, (warning): ‘O people, you have undergone a trial by virtue of this (calf), whilst your Lord is (not this,) but surely (He) the Most Kind One. So follow me and obey my command.’
91. وہ بولی: ہم تو اسی (کی پوجا) پر جمے رہیں گے تاوقتیکہ موسٰی (علیہ السلام) ہماری طرف پلٹ آئیںo
91. They said: ‘We shall hold fast to its (worship) until Musa (Moses) comes back to us.’
92. (موسٰی علیہ السلام نے) فرمایا: اے ہارون! تم کو کس چیز نے روکے رکھا جب تم نے دیکھا کہ یہ گمراہ ہو رہے ہیںo
92. Musa (Moses) said: ‘O Harun (Aaron), when you saw them erring, what stopped you,
93. (مزید یہ کہ تمہیں کس نے منع کیا کہ انہیں سختی سے روکنے میں) تم میرے طریقے کی پیروی نہ کرو، کیا تم نے میری نافرمانی کیo
93. (Moreover, who prohibited you) from following my way (in forbidding them fiercely)? Did you disobey me?’
94. (ہارون علیہ السلام نے) کہا: اے میری ماں کے بیٹے! آپ نہ میری داڑھی پکڑیں اور نہ میرا سر، میں (سختی کرنے میں) اس بات سے ڈرتا تھا کہ کہیں آپ یہ (نہ) کہیں کہ تم نے بنی اسرائیل کے درمیان فرقہ بندی کردی ہے اور میرے قول کی نگہداشت نہیں کیo
94. (Harun [Aaron]) said: ‘O son of my mother, seize me not by my beard or my head. (In being harsh) I feared you would say: You have created division amongst the Children of Israel and have not safeguarded my word.’
95. (موسٰی علیہ السلام نے) فرمایا: اے سامری! (بتا) تیرا کیا معاملہ ہےo
95. (Musa [Moses]) said: ‘Samiri, (tell me,) what is the matter with you?’
96. اس نے کہا: میں نے وہ چیز دیکھی جو ان لوگوں نے نہیں دیکھی تھی سو میں نے اُس فرستادہ (فرشتے) کے نقش قدم سے (جو آپ کے پاس آیا تھا) ایک مٹھی (مٹی کی) بھر لی پھر میں نے اسے (بچھڑے کے قالب میں) ڈال دیا اور اسی طرح میرے نفس نے مجھے (یہ بات) بھلی کر دکھائیo
96. He said: ‘I saw what these people had not seen. I took a handful (of dust) from the footstep of the angel (that visited you); then I cast it (into the model of the calf), and this way my (lower) self made (it) attractive to me.’
97. (موسٰی علیہ السلام نے) فرمایا: پس تو (یہاں سے نکل کر) چلا جا چنانچہ تیرے لئے (ساری) زندگی میں یہ (سزا) ہے کہ تو (ہر کسی کو یہی) کہتا رہے: (مجھے) نہ چھونا (مجھے نہ چھونا)، اور بیشک تیرے لئے ایک اور وعدۂ (عذاب) بھی ہے جس کی ہرگز خلاف ورزی نہ ہوگی، اور تو اپنے اس (من گھڑت) معبود کی طرف دیکھ جس (کی پوجا) پر تو جم کر بیٹھا رہا، ہم اسے ضرور جلا ڈالیں گے پھر ہم اس (کی راکھ) کو ضرور دریا میں اچھی طرح بکھیر دیں گےo
97. Musa (Moses) said: ‘So (get out from here and) go away. There is for you a lifelong (punishment) that you will keep saying (to everyone): Touch (me) not, (touch me not). And there is yet another promise (of punishment) for you which will not be averted at all. And look at this (self-made) god of yours to which you held fast (in worship). We will surely burn it and scatter (its dust) well over the river.
98. (لوگو!) تمہارا معبود صرف (وہی) اللہ ہے جس کے سوا کوئی معبود نہیں، وہ ہر چیز کو (اپنے) علم کے احاطہ میں لئے ہوئے ہےo
98. (O my people! He) Allah alone is your God apart from Whom there is no God. He has encompassed everything in (His) knowledge.’
99. اس طرح ہم آپ کو (اے حبیبِ معظّم!) ان (قوموں) کی خبریں سناتے ہیں جو گزر چکی ہیں اور بیشک ہم نے آپ کو اپنی خاص جناب سے ذکر (یعنی نصیحت نامہ) عطا فرمایا ہےo
99. (O Esteemed Beloved!) Thus We communicate to you news about (the communities) who have passed away, and We have surely given you from Our exclusive presence the Reminder (i.e., an Admonishing Book).
100. جو شخص اس سے روگردانی کرے گا تو بیشک وہ قیامت کے دن سخت بوجھ اٹھائے گاo
100. Whoever turns away from it will certainly carry an unmanageable burden on the Day of Rising.
101. وہ اس (عذاب) میں ہمیشہ (پڑے) رہیں گے، اور ان کے لئے قیامت کے دن بہت ہی بُرا بوجھ ہوگاo
101. They will (remain) in this (torment) forever, and it will be a very evil burden for them on the Day of Rising.
102. جس دن صور پھونکا جائے گا اور اس دن ہم مجرموں کو یوں جمع کریں گے کہ ان کے جسم اور آنکھیں (شدّتِ خوف اور اندھے پن کے باعث) نیلگوں ہوں گیo
102. The Day when the trumpet will be blown, We shall assemble the evildoers with their bodies and eyes turned blue (due to intense fear and loss of sight),
103. آپس میں چپکے چپکے باتیں کرتے ہوں گے کہ تم دنیا میں مشکل سے دس دن ہی ٹھہرے ہوگےo
103. Inaudibly whispering to one another: ‘You stayed in the world hardly for ten days.’
104. ہم خوب جانتے ہیں وہ جو کچھ کہہ رہے ہوں گے جبکہ ان میں سے ایک عقل و عمل میں بہتر شخص کہے گا کہ تم تو ایک دن کے سوا (دنیا میں) ٹھہرے ہی نہیں ہوo
104. We know best what they will be saying, whilst one of them better in wisdom and deeds will say: ‘You have not stayed (in the world) for more than a day.’
105. اور آپ سے یہ لوگ پہاڑوں کی نسبت سوال کرتے ہیں، سو فرمادیجئے: میرا رب انہیں ریزہ ریزہ کر کے اڑا دے گاo
105. And they ask you concerning mountains. So say: ‘My Lord will blow them off as dust particles,
106. پھر اسے ہموار اور بے آب و گیاہ زمین بنا دے گاo
106. Then will change it into a levelled, barren land,
107. جس میں آپ نہ کوئی پستی دیکھیں گے نہ کوئی بلندیo
107. In which you will find neither any depression nor any elevation.’
108. اس دن لوگ پکارنے والے کے پیچھے چلتے جائیں گے اس (کے پیچھے چلنے) میں کوئی کجی نہیں ہوگی، اور (خدائے) رحمان کے جلال سے سب آوازیں پست ہوجائیں گی پس تم ہلکی سی آہٹ کے سوا کچھ نہ سنوگےo
108. On that Day, people will tread on behind the caller, and there will be no deviation in (following) him. And all voices will be hushed due to the Majesty of the Most Kind (Lord). So you will not hear anything except a faint sound of a stir.
109. اس دن سفارش سود مند نہ ہوگی سوائے اس شخص (کی سفارش) کے جسے (خدائے) رحمان نے اذن (و اجازت) دے دی ہے اور جس کی بات سے وہ راضی ہوگیا ہے (جیسا کہ انبیاء و مرسلین، اولیاء، متقین، معصوم بچوں اور دیگر کئی بندوں کا شفاعت کرنا ثابت ہے)o
109. On that Day, no intercession shall be fruitful except his (intercession) whom the Most Kind (Lord) has granted leave (and permission) and with whose word He is pleased (such as Prophets and Messengers, Allah’s chosen and pious servants, Godwary slaves, innocent children, and many other devoted servants of Allah whose intercession is validated).
110. وہ ان (سب چیزوں) کو جانتا ہے جو ان کے آگے ہیں اور جو ان کے پیچھے ہیں اور وہ (اپنے) علم سے اس (کے علم) کا احاطہ نہیں کرسکتےo
110. He knows all those (things) which are ahead of them and which are behind them, and they cannot encompass His (knowledge) with (their) knowledge.
111. اور (سب) چہرے اس ہمیشہ زندہ (اور) قائم رہنے والے (رب) کے حضور جھک جائیں گے، اور بیشک وہ شخص نامراد ہوگا جس نے ظلم کا بوجھ اٹھا لیاo
111. And (all) faces will bow down before the holy presence of the Ever-Living (and) Self-Subsisting (Lord), and surely he who bears the burden of wrongdoing will crumble to failure.
112. اور جو شخص نیک عمل کرتا ہے اور وہ صاحبِ ایمان بھی ہے تو اسے نہ کسی ظلم کا خوف ہوگا اور نہ نقصان کاo
112. And whoever does righteous deeds and is also blessed with faith will fear neither any injustice nor any harm.
113. اور اسی طرح ہم نے اس (آخری وحی) کو عربی زبان میں (بشکلِ) قرآن اتارا ہے اور ہم نے اس میں (عذاب سے) ڈرانے کی باتیں بار بار (مختلف طریقوں سے) بیان کی ہیں تاکہ وہ پرہیزگار بن جائیں یا (یہ قرآن) ان (کے دلوں) میں یادِ (آخرت یا قبولِ نصیحت کا جذبہ) پیدا کردےo
113. And in this way have We sent down (this last Revealed Book) in the Arabic tongue (in the shape of) the Qur’an, and have explained in it more often than not matters inspiring fear (of torment, in diverse ways,) so that they may become Godfearing, or this (Qur’an) may inculcate in their (hearts a passion for the acceptance of admonition, or) the remembrance (of the Last Day).
114. پس اللہ بلند شان والا ہے وہی بادشاہِ حقیقی ہے، اور آپ قرآن (کے پڑھنے) میں جلدی نہ کیا کریں قبل اس کے کہ اس کی وحی آپ پر پوری اتر جائے، اور آپ (رب کے حضور یہ) عرض کیا کریں کہ اے میرے رب! مجھے علم میں اور بڑھا دےo
114. So Most High and Exalted is Allah. He alone is the True Sovereign. And do not hasten in (reciting) the Qur’an before its revelation is fully accomplished to you. And always submit (before the holy presence of your Lord): ‘O my Lord, increase me further in knowledge.’
115. اور درحقیقت ہم نے اس سے (بہت) پہلے آدم (علیہ السلام) کو تاکیدی حکم فرمایا تھا سو وہ بھول گئے اور ہم نے ان میں بالکل (نافرمانی کا کوئی) ارادہ نہیں پایا (یہ محض ایک بھول تھی)o
115. And truly, (far) earlier than this, We had given a strict command to Adam but he forgot. And We did not observe in him any intention (to disobey) at all (it was just an omission).
116. اور (وہ وقت یاد کریں) جب ہم نے فرشتوں سے فرمایا: تم آدم (علیہ السلام) کو سجدہ کرو تو انہوں نے سجدہ کیا سوائے ابلیس کے، اس نے انکار کیاo
116. And (recall the time) when We commanded the angels: ‘Prostrate yourselves before Adam,’ they fell down in prostration except Iblis. He refused.
117. پھر ہم نے فرمایا: اے آدم! بیشک یہ (شیطان) تمہارا اور تمہاری بیوی کا دشمن ہے، سو یہ کہیں تم دونوں کو جنت سے نکلوا نہ دے پھر تم مشقت میں پڑ جاؤ گےo
117. Then We said: ‘O Adam, verily, this (Satan) is an enemy to you and your wife. So let him not get you both ousted from Paradise; then you shall be put to toil.
118. بیشک تمہارے لئے اس (جنت) میں یہ (راحت) ہے کہ تمہیں نہ بھوک لگے گی اور نہ برہنہ ہوگےo
118. Surely, there is this (comfort) for you (in Paradise) that you will neither feel hungry nor go naked.
119. اور یہ کہ تمہیں نہ یہاں پیاس لگے گی اور نہ دھوپ ستائے گیo
119. And that you will neither feel thirsty here, nor suffer the heat of the sun.’
120. پس شیطان نے انہیں (ایک) خیال دلا دیا وہ کہنے لگا: اے آدم! کیا میں تمہیں (قربِ الٰہی کی جنت میں) دائمی زندگی بسر کرنے کا درخت بتا دوں اور (ایسی ملکوتی) بادشاہت (کا راز) بھی جسے نہ زوال آئے گا نہ فنا ہوگیo
120. But Satan suggested him (an) idea. He said: ‘O Adam! Shall I inform you of the tree of immortality (in the Paradise of Allah’s nearness), and also the (secret of that divine) dominion which will neither fall nor cease to exist?’
121. سو دونوں نے (اس مقامِ قربِ الٰہی کی لازوال زندگی کے شوق میں) اس درخت سے پھل کھا لیا پس ان پر ان کے مقام ہائے سَتَر ظاہر ہو گئے اور دونوں اپنے (بدن) پر جنت (کے درختوں) کے پتے چپکانے لگے اور آدم (علیہ السلام) سے اپنے رب کے حکم (کو سمجھنے) میں فروگذاشت ہوئی٭ سو وہ (جنت میں دائمی زندگی کی) مراد نہ پا سکےo
٭ (کہ ممانعت مخصوص ایک درخت کی تھی یا اس کی پوری نوع کی تھی، کیونکہ آپ علیہ السلام نے پھل اس مخصوص درخت کا نہیں کھایا تھا بلکہ اسی نوع کے دوسرے درخت سے کھایا تھا، یہ سمجھ کر کہ شاید ممانعت اسی ایک درخت کی تھی۔)
121. So (in fondness of that station of eternal nearness to Allah) both ate the fruit of that tree. So, their private parts became exposed to them, and both began to stick to their (bodies) the leaves of (the trees in) Paradise. And Adam made a mistake (by way of omission) in (understanding) his Lord’s command.* So he could not achieve the aim (of eternal life in Paradise).
* The prohibition did not pertain to a particular tree; it rather signified the whole of its kind. He did not eat of a particular tree but of another tree of the same kind. He was under the impression that perhaps it was a particular tree which was prohibited and which he abstained from.
122. پھر ان کے رب نے انہیں (اپنی قربت و نبوت کے لئے) چن لیا اور ان پر (عفو و رحمت کی خاص) توجہ فرمائی اور منزلِ مقصود کی راہ دکھا دیo
122. Then his Lord chose him (for His nearness and Prophethood), and turned to him (in His exceptional forgiveness and mercy), and showed the path to the coveted destination.
123. ارشاد ہوا: تم یہاں سے سب کے سب اتر جاؤ، تم میں سے بعض بعض کے دشمن ہوں گے، پھر جب میری جانب سے تمہارے پاس کوئی ہدایت (وحی) آجائے سو جو شخص میری ہدایت کی پیروی کرے گا تو وہ نہ (دنیا میں) گمراہ ہوگا اور نہ (آخرت میں) بدنصیب ہوگاo
123. (Allah) said: ‘Go down from here, all of you. Some of you will be enemies to some others. Then if there comes to you any Guidance (Revelation) from Me, whoever will follow My Guidance will neither lose the straight path (in the world), nor face misfortune (in the Hereafter).
124. اور جس نے میرے ذکر (یعنی میری یاد اور نصیحت) سے روگردانی کی تو اس کے لئے دنیاوی معاش (بھی) تنگ کردیا جائے گا اور ہم اسے قیامت کے دن (بھی) اندھا اٹھائیں گےo
124. And whoever turns away from My direction and guidance (i.e., remembrance and advice), his worldly sustenance will be narrowed, and We shall raise him blind on the Day of Resurrection (as well).’
125. وہ کہے گا: اے میرے رب! تو نے مجھے (آج) اندھا کیوں اٹھایا حالانکہ میں (دنیا میں) بینا تھاo
125. He will say: ‘O my Lord, why have You raised me up blind (Today) whereas I had vision (in the world)?’
126. ارشاد ہوگا: ایسا ہی (ہوا کہ دنیا میں) تیرے پاس ہماری نشانیاں آئیں پس تو نے انہیں بھلا دیا اور آج اسی طرح تو (بھی) بھلا دیا جائے گاo
126. (Allah) will say: ‘In like manner, Our signs came to you (in the world), but you forgot them, and the same way you (too) will be forgotten Today.’
127. اور اسی طرح ہم اس شخص کو بدلہ دیتے ہیں جو (گناہوں میں) حد سے نکل جائے اور اپنے رب کی آیتوں پر ایمان نہ لائے، اور بیشک آخرت کا عذاب بڑا ہی سخت اور ہمیشہ رہنے والا ہےo
127. And that is how We recompense the one who exceeds the limit (in sins), and does not believe in the Revelations of his Lord, and surely the torment of the Last Day is extremely severe and everlasting.
128. کیا انہیں (اس بات نے) ہدایت نہ دی کہ ہم نے ان سے پہلے کتنی ہی امتوں کو ہلاک کر دیا جن کی رہائش گاہوں میں (اب) یہ لوگ چلتے پھرتے ہیں، بیشک اس میں دانش مندوں کے لئے (بہت سی) نشانیاں ہیںo
128. Has (this fact) not guided them as to how many people We destroyed before them in whose dwelling places they (now) walk about? Undoubtedly, in this are (many) signs for the wise.
129. اور اگر آپ کے رب کی جانب سے ایک بات پہلے سے طے نہ ہو چکی ہوتی اور (ان کے عذاب کے لئے قیامت کا) وقت مقرر نہ ہوتا تو (ان پر عذاب کا ابھی اترنا) لازم ہو جاتاo
129. And had it not been settled already by your Lord, and the time (of the Day of Resurrection) not fixed (for their torment, befalling them) the calamity (right now) would have been inevitable.
130. پس آپ ان کی (دل آزار) باتوں پر صبر فرمایا کریں اور اپنے رب کی حمد کے ساتھ تسبیح کیا کریں طلوعِ آفتاب سے پہلے (نمازِ فجر میں) اور اس کے غروب سے قبل (نمازِ عصر میں)، اور رات کی ابتدائی ساعتوں میں (یعنی مغرب اور عشاء میں) بھی تسبیح کیا کریں اور دن کے کناروں پر بھی (نمازِ ظہر میں جب دن کا نصفِ اوّل ختم اور نصفِ ثانی شروع ہوتا ہے، (اے حبیبِ مکرّم! یہ سب کچھ اس لئے ہے) تاکہ آپ راضی ہو جائیںo
130. So bear their (heart-rending) talk patiently and glorify your Lord with His praise before the rising of the sun (in Fajr [Dawn] Prayer) and before its setting (in the ‘Asr [Afternoon] Prayer) and glorify Him in the early hours of night (the Maghrib [Sunset] and ‘Isha’ [Night] Prayer) and also at the ends of the day (in Zuhr [Midday] Prayer when the first half of the day ends and the second half starts. O Esteemed Beloved, all this is designed) so that you may be pleased.
131. اور آپ دنیوی زندگی میں زیب و آرائش کی ان چیزوں کی طرف حیرت و تعجب کی نگاہ نہ فرمائیں جو ہم نے (کافر دنیاداروں کے) بعض طبقات کو (عارضی) لطف اندوزی کے لئے دے رکھی ہیں تاکہ ہم ان (ہی چیزوں) میں ان کے لئے فتنہ پیدا کر دیں، اور آپ کے رب کی (اخروی) عطا بہتر اور ہمیشہ باقی رہنے والی ہےo
131. And do not glance with amazement and wonder at the adornments (of worldly life) which We have provided to some classes (of the disbelieving materialists) for their (short-term) luxury so that We may cause for them a trial in these (very things). And the provision of your Lord (in the Hereafter) is the best and eternal.
132. اور آپ اپنے گھر والوں کو نماز کا حکم فرمائیں اور اس پر ثابت قدم رہیں، ہم آپ سے رزق طلب نہیں کرتے (بلکہ) ہم آپ کو رزق دیتے ہیں، اور بہتر انجام پرہیزگاری کا ہی ہےo
132. And enjoin Prayer on your family and strictly adhere to it. And We do not ask for provision from you, (rather) We provide for you. And it is the act of fearing God that brings about best results.
133. اور (کفار) کہتے ہیں کہ یہ (رسول) ہمارے پاس اپنے رب کی طرف سے کوئی نشانی کیوں نہیں لاتے، کیا ان کے پاس ان باتوں کا واضح ثبوت (یعنی قرآن) نہیں آگیا جو اگلی کتابوں میں (مذکور) تھیںo
133. And (the disbelievers) say: ‘Why does this (Prophet) not bring us any sign from his Lord?’ Has there not come to them (the Qur’an,) a clear proof of the things (mentioned) in the former Books?
134. اور اگر ہم ان لوگوں کو اس سے پہلے (ہی) کسی عذاب کے ذریعہ ہلاک کرڈالتے تو یہ کہتے: اے ہمارے رب! تو نے ہمارے پاس کسی رسول کو کیوں نہ بھیجا کہ ہم تیری آیتوں کی پیروی کرلیتے اس سے قبل کہ ہم ذلیل اور رسوا ہوتےo
134. And had We destroyed them through some calamity already, they would have said: ‘O Lord, why did You not send us any Messenger so that we might have followed Your Revelations before we were humiliated and disgraced?’
135. فرما دیجئے: ہر کوئی منتظر ہے، سو تم انتظار کرتے رہو، پس تم جلد ہی جان لوگے کہ کون لوگ راہِ راست والے ہیں اور کون ہدایت یافتہ ہیںo
135. Say: ‘Everyone is waiting, so wait on. You will soon come to know who are the people of the right path and who are the guided ones.’
Previous Sura     Index     Next Sura
Read Quran | Listen to Quran | Search Quran | Download Quran | Buy Quran
Comments | The Translator | Site Map | Privacy Policy | Urdu version | Download Fonts
Minhaj-ul-Quran | Welfare | Overseas | Multimedia | Books | Durood | Magazines | Publications
irfan-ul-quran irfan-ul-quran
Developed By : Minhaj Internet Bureau, Lahore PK
elearning Minhaj-ul-Quran