Play Copy

ﮛﮜﮝﮞﮟﮠﮡﮢﮣﮤﮥﮦﮧﮨﮩﮪﮫﮬﮭ

6. یہ اس لئے کہ اُن کے پاس اُن کے رسول واضح نشانیاں لے کر آتے تھے تو وہ کہتے تھے: کیا (ہماری ہی مثل اور ہم جنس) بشر٭ ہمیں ہدایت کریں گے؟ سو وہ کافر ہوگئے اور انہوں نے (حق سے) رُوگردانی کی اور اللہ نے بھی (اُن کی) کچھ پرواہ نہ کی، اور اللہ بے نیاز ہے لائقِ حمد و ثنا ہےo

٭ بشر کا یہ معنی ائمہ تفاسیر کے بیان کردہ معنی کے مطابق ہے۔ حوالہ جات کے لئے دیکھیں: تفسیر طبری، الکشاف، نسفی، بغوی، خازن، جمل، مظہری اور فتح القدیر وغیرہ۔

6. That is because their Messengers brought them clear signs, but they said: ‘Shall a human being (who is our like and from our kind) guide us?’* So they became disbelievers and turned away (from the truth). And Allah too disregarded (them) and Allah is Self-Sufficient, Praiseworthy.

* This meaning of the word bashar (human being) is according to what the eminent exegetes have described. See: Tafsir al-Tabari, al-Kashshaf, al-Nasafi, al-Baghawi, al-Khazin, al-Jumal, al-Mazhari and Fath al-Qadir, etc.

(التَّغَابُن، 64 : 6)