Surah al-Fajr

Irfan-ul-Quran
  • 30پارہ نمبر
  • 30آيات
  • 1رکوع
  • 10ترتيب نزولي
  • 89ترتيب تلاوت
  • مکیسورہ
Play Copy
Play Copy
Play Copy

ﭖﭗﭘ

3. اور جفت کی قَسم اور طاق کی قَسم٭o

٭ جفت (جوڑا) سے مراد کل مخلوق ہے جو جوڑوں کی صورت میں پیدا کی گئی ہے، اور طاق (فرد و تنہا) سے مراد خالق ہے جو وحدہ لا شریک ہے۔ یا شَفع یومِ نحر (قربانی) اور وَتر یومِ عرفہ (حج) ہے، یا شَفع سے مراد دنیا کے شب و روز ہیں اور وَتر سے مراد یومِ قیامت ہے جس کی کوئی شب نہ ہوگی۔ یا شَفع سے مراد سال بھر کی عام جفت راتیں ہیں اور وَتر سے مراد سال بھر کی برکت والی طاق راتیں ہیں، مثلاً شبِ معراج، شبِ برات اور شبِ قدر وغیرہ جو پے در پے رجب، شعبان اور رمضان میں آتی ہیں۔ یا شَفع سے مراد حضرت آدم علیہ السلام اور حضرت حواء علیہا السلام کا پہلا جوڑا ہے اور وَتر سے مراد تنہا حضرت آدم علیہ السلام، جن سے تخلیقِ انسانیت کی ابتداء ہوئی۔

3. And by the even and the odd,*

* ‘Even’ (pair) refers to the whole creation begotten in pairs and ‘odd’ (individual, single) implies the Creator Who has no equal. Or shaf‘ connotes the ‘Day of Sacrifice’ and watr refers to the ‘the Day of Arafat’ (in the Hajj—Pilgrimage). Shaf‘ also means the days and nights of the worldly life whilst watr may denote the Day of Resurrection. Shaf‘ also stands for all even nights of the year whilst watr are all blissful odd nights of the year such as the night of Mi‘raj, the night of Bara’a and the night of Qadr which come successively in the months of Rajab, Sha‘ban and Ramadan. Shaf‘ also points to the first couple of Adam and Eve when together whereas watr connotes Adam who was alone and who begot the human race.

(الْفَجْر، 89 : 3)
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy
Play Copy