اس سورہ مبارکہ کا نام القصص ہے۔ یہ بھی مکی زندگی کے درمیانی عہد میں نازل ہونے والی سورتوں میں سے ایک سورہ ہے۔ اس کے مضامین میں استعماری طاقتوں کا بطلان، اسلام کے نظام معاشیات، اسلام کے نظام قانون، اسلام کے نظام اخلاق کی تفصیلات شامل ہیں۔

Play Copy

وَ اَنۡ اَلۡقِ عَصَاکَ ؕ فَلَمَّا رَاٰہَا تَہۡتَزُّ کَاَنَّہَا جَآنٌّ وَّلّٰی مُدۡبِرًا وَّ لَمۡ یُعَقِّبۡ ؕ یٰمُوۡسٰۤی اَقۡبِلۡ وَ لَا تَخَفۡ ۟ اِنَّکَ مِنَ الۡاٰمِنِیۡنَ ﴿۳۱﴾

31. اور یہ کہ اپنی لاٹھی (زمین پر) ڈال دو، پھر جب موسٰی (علیہ السلام) نے اسے دیکھا کہ وہ تیز لہراتی تڑپتی ہوئی حرکت کر رہی ہے گویا وہ سانپ ہو، تو پیٹھ پھیر کر چل پڑے اور پیچھے مڑ کر نہ دیکھا، (ندا آئی:) اے موسٰی! سامنے آؤ اور خوف نہ کرو، بیشک تم امان یافتہ لوگوں میں سے ہوo

31. And throw your staff (on the ground).’ So when Musa (Moses) saw it moving fast, coiling and curling as if it was a snake, he turned his back, jogged off and did not look behind. (The Voice said:) ‘O Musa (Moses), come forth and do not fear. Surely, you are of the secure.

(الْقَصَص، 28 : 31)